یہ دل کسی بھی طرح شام غم گزار تو دے





یہ دل کسی بھی طرح  شام غم گزار  تو  دے
پھر اس کے بعد وہ عمروں کا انتظار تو دے


ہواۓ  موسم  گل   جانفزا  ہے   اپنی   جگہ
مگر  کوئی  خبر   یار خوش   دیار تو  دے


ہمیں بھی ضد ہے کہاں عمر بھر نبھانے کی
مگر  وہ  ترک تعلق   کا   اختیار  تو  دے


بجا ہے کہ درد سری ہے  یہ زندگی  کرنا
مگر  یہ  بار امانت  کوئی    اتار   تو دے


تیرا ہی ذکر کریں   بس تجھی کو یاد کریں
یہ فرصتیں بھی کبھی فکر روزگار تو دے


تیرے کرم بھی مجھے یاد ہیں مگر مرا دل
جو  قرض  اہل زمانہ کے  ہیں اتار تو دے


فلک سے ہم بھی کریں ظلم ناروا کے گلے
پہ سانس لینے کی مہلت ستم شعار تو دے


فراز  جان  سے  گزرنا  تو  کوئی  بات نہیں
مگر اب اس کی اجازت بھی چشم یار تو دے


.

Reflections

The way we express ourselves is a reflection to our inner self. Our traffic queues prove how disorganized we are and what our thinking level is as a nation, if in any way we can call ourselves a nation. Eating donkeys, cheating for money, stabbing own blood etc are some of the salient qualities of the fort of Islam – Pakistan. Just look at how organized and managed the vegetable outlets are in Saudi Arabia. This might already upset some religious haters who cannot do anything towards their own country, let just criticizing another country. Cleanliness is next to Godliness. I guess even God has many forms in one country based on one God.