یہ دل کسی بھی طرح شام غم گزار تو دے





یہ دل کسی بھی طرح  شام غم گزار  تو  دے
پھر اس کے بعد وہ عمروں کا انتظار تو دے


ہواۓ  موسم  گل   جانفزا  ہے   اپنی   جگہ
مگر  کوئی  خبر   یار خوش   دیار تو  دے


ہمیں بھی ضد ہے کہاں عمر بھر نبھانے کی
مگر  وہ  ترک تعلق   کا   اختیار  تو  دے


بجا ہے کہ درد سری ہے  یہ زندگی  کرنا
مگر  یہ  بار امانت  کوئی    اتار   تو دے


تیرا ہی ذکر کریں   بس تجھی کو یاد کریں
یہ فرصتیں بھی کبھی فکر روزگار تو دے


تیرے کرم بھی مجھے یاد ہیں مگر مرا دل
جو  قرض  اہل زمانہ کے  ہیں اتار تو دے


فلک سے ہم بھی کریں ظلم ناروا کے گلے
پہ سانس لینے کی مہلت ستم شعار تو دے


فراز  جان  سے  گزرنا  تو  کوئی  بات نہیں
مگر اب اس کی اجازت بھی چشم یار تو دے


.

غزل

یہ دِل کسی بھی طرح شامِ غم گزار تو دے
پھر اس کے بعد وہ عمروں کا انتظار تو دے

ہوائے موسمِ گُل جانفزا ہے اپنی جگہ
مگر کوئی خبرِ یارِ خوش دیار تو دے

ہمیں بھی ضد ہے کہاں عمر بھر نبھانے کی
مگر وہ ترکِ تعلق کا اختیار تو دے

بجا کہ درد سری ہے یہ زندگی کرنا
مگر یہ بارِ امانت کوئی اُتار تو دے

ترا ہی ذکر کریں بس تجھی کو یاد کریں
یہ فرصتیں بھی کبھی فکرِ روزگار تو دے

ترے کرم بھی مجھے یاد ہیں مگر مرا دل
جو قرض اہلِ زمانہ کے ہیں اُتار تو دے

فلک سے ہم بھی کریں ظلمِ ناروا کے گِلے
پہ سانس لینے کی مہلت ستم شعار تو دے

فرازؔ جاں سے گزرنا تو کوئی بات نہیں
مگر اب اس کی اجازت بھی چشمِ یار تو دے

Poem By Ahmed Faraz

Bhaid paen to rah-e-yaar mein gum ho jayen!
Warna kis wastay bay-kaar mein gum ho jayen!

Kya karain arz-e-tamanna k tujhe dekhtay he
Lafz pay-ra-ee-ya -e-izhaar mein gum ho jayen

Yeh na ho tum bhe kise bheed mein kho jao kahin
Yeh na ho hum kise bazaar mein gum ho jayen!

Kis tarah tujh se kahain kitna bhala lagta hai
Tujh ko dekhain teray deedar mein gum ho jayen!

Hum teray shauq mein yun khud ko ganwa bethay hain
Jaise bachay kise tehwaar mein gum ho jayen

Aisa aashob-e-zamana hai k darr lagta hai
Dil k mazmoon he na ashaar mein gum ho jayen

Sheharyaaron k bulaavay bahut aatay hain Faraz!
Yeh na ho aap bhe darbar mein gum ho jayen!

غزل

اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں

یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں

یونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے

کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

زندگی تیری عطا تھی سو ترے نام کی ہے

ہم نے جیسے بھی بسر کی ترا احساں جاناں

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہے فسردہ تو بھی

دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر

بے پیے بھی ترا چہرہ تھا گلستاں جاناں

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں

رگ مینا سلگ اٹھی کہ رگ جاں جاناں

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید

دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جاناں جاناں

ہم بھی کیا سادہ تھے ہم نے بھی سمجھ رکھا تھا

غم دوراں سے جدا ہے غم جاناں جاناں

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جاناں

سر بہ زانو ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے

ہر کوئی اپنے ہی سائے سے ہراساں جاناں

جس کو دیکھو وہی زنجیر بہ پا لگتا ہے

شہر کا شہر ہوا داخل زنداں جاناں

اب ترا ذکر بھی شاید ہی غزل میں آئے

اور سے اور ہوئے درد کے عنواں جاناں

ہم کہ روٹھی ہوئی رت کو بھی منا لیتے تھے

ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں

ہوش آیا تو سبھی خواب تھے ریزہ ریزہ

جیسے اڑتے ہوئے اوراق پریشاں جاناں

July 1, 2003 / 04:02 PM / Lahore