غزل

یہ دِل کسی بھی طرح شامِ غم گزار تو دے
پھر اس کے بعد وہ عمروں کا انتظار تو دے

ہوائے موسمِ گُل جانفزا ہے اپنی جگہ
مگر کوئی خبرِ یارِ خوش دیار تو دے

ہمیں بھی ضد ہے کہاں عمر بھر نبھانے کی
مگر وہ ترکِ تعلق کا اختیار تو دے

بجا کہ درد سری ہے یہ زندگی کرنا
مگر یہ بارِ امانت کوئی اُتار تو دے

ترا ہی ذکر کریں بس تجھی کو یاد کریں
یہ فرصتیں بھی کبھی فکرِ روزگار تو دے

ترے کرم بھی مجھے یاد ہیں مگر مرا دل
جو قرض اہلِ زمانہ کے ہیں اُتار تو دے

فلک سے ہم بھی کریں ظلمِ ناروا کے گِلے
پہ سانس لینے کی مہلت ستم شعار تو دے

فرازؔ جاں سے گزرنا تو کوئی بات نہیں
مگر اب اس کی اجازت بھی چشمِ یار تو دے

The Door

Some thoughts crawl under the skin at this time of night.
They have tentacles.
Thoughts about a door.
The door that never opened.
I knocked again.
And waited.
But I heard no sound.
Of keys.
Of locks getting unlocked.
Of steps.
Nothing
But I had a hope.
So I kept sitting.
And waiting.
Till the night fell.
And it was dark.
But I heard no sound.
Of keys.
Of locks getting unlocked.
Of steps.
Nothing.

After years
Today.
So many doors opened.
New doors.
So many doors.
And I can walk through them.
But that charm has vanished.
I am sitting on the pavement.
Watching those who opened them.
Where were they
Earlier
When I needed them.
When I knocked.
And heard no sound.
Of keys.
Of locks getting unlocked.
Of anything!

Even at this time of night
I see a door.
Far across the road.
The door that never opened.

Aamir Ali Bilal
(24th Jan 2010 / 1:39 AM / Karachi)

ناصر کاظمی کی نظم

اولیں چاند نے کیا بات سمجھائی مجھ کو

یاد آئی تیری انگشت حنائی مجھ کو

دیکھتے دیکھتے تاروں کا سفر ختم ہوا

سو گیا چاند مگر نیند نہ آئی مجھ کو

انہی آنکھوں نے دکھائے کئی بھر پور جمال

انہی آنکھوں نے شب ہجر دکھائی مجھ کو

ساۓ کی طرح مرے ساتھ رہے رنج و الم

گردش وقت کہیں راس نہ آئی مجھ کو

دھوپ ادھر ڈھلتی تھی دل ڈوبا جاتا تھا ادھر

آج تک یاد ہے وہ شام جدائی مجھ کو

شہر لاہور تری رونقیں دائم آباد

تیری گلیوں کی ہوا کھینچ کے لائی مجھ کو

کبھی عشق ہو تو پتہ چلے

I met a girl.
She didn’t believe in any thing poetic.
Love included.
Still.
I asked her some questions.

”Aamir! I don’t believe in luck. I don’t believe in magic. I don’t believe in charms. I don’t believe in love.”

At that moment I wished she had believed. I don’t know why but that sudden storm was perhaps hormonal. Reminded me of a poem.

 

کہ بساط جان پہ عذاب اترتے ہیں کس طرح
شب و روز دل پہ عتاب اترتے ہیں کس طرح

یہ جو لوگ سے ہیں چھپے ہوئے پس دوستاں … تو یہ کون ہیں
یہ جو روگ سے ہیں چھپے ہوئے پس جسم و جان تو… یہ کس لیے

یہ جو کان ہیں میرے آہٹوں پہ لگے ہوئے… تو یہ کیوں بھلا
یہ جو ہونٹ ہیں صف دوستاں میں سلے ہوئے…تو یہ کس لیے

یہ جو اضطراب رچا ہوا ہے وجود میں… تو یہ کیوں بھلا
یہ جو سنگ سا کوئی آ گرا ہے جمود میں… تو یہ کس لیے

یہ جو دل میں درد چھڑا ہوا ہے لطیف سا… تو یہ کب سے ہے
یہ جو پتلیوں میں ہے عکس کوئی خفیف سا… تو یہ کب سے ہے

یہ جو آنکھ میں کوئی برف سی ہے جمی ہوئی… تو یہ کس لیے
یہ جو دوستوں میں نئی نئی ہے کمی کوئی… تو یہ کیوں بھلا

یہ جو لوگ پیچھے پڑے ہوئے ہیں فضول میں… انہیں کیا پتہ… انہیں کیا خبر
کسی راہ کے کسی موڑ پر جو ذرا انہیں… کبھی عشق ہو تو پتہ چلے

کبھی عشق ہو تو پتہ چلے
 

Love Expression

اک دن مجنوں نوں کسے آکھیا
One day someone said to majnoo

کی یار تیری لیلی کالی
Hey! Your Laila is black(tan)!

اگوں مجنوں نے جواب دتا
In reply, Majnoo said

او تیری انکھ نئیں دیکھن والی
Unfortunately your eyes cant see what I see

قرآن شریف دے پنے چٹے اور اتے شاہی کالی
The pages of Quran are white and the ink on them is black

جدوں دل مل جاندے پھر کی گوری کی کالی
When hearts unite, the color never matters

Bullay Shah

Abdul Ghani Khan – Poetry

I do not need your red, sculpted lips,
Nor hair in loops like a serpent’s coils,
Nor a nape as graceful as a swan’s,
Nor narcissus eyes full of drunkenness,
Nor teeth as perfect as pearls of heaven,
Nor cheeks ruddy and full as pomegranates,
Nor a voice mellifluous as a sarinda,
Nor a figure as elegant as a poplar,
But show me just this one thing,
My love,
I seek a heart stained like a poppy flower – pearls by millions I would gladly cede, for the sake of tears borne of love and grief – entreaty.

Adapted from writings of Abdul Ghani Khan – a Pashto poet. Translation and adaptation by Nahida Ahmed, student at Fatima Jinnah Women University, Rawalpindi.

غزل

اب کے تجدید وفا کا نہیں امکاں جاناں

یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں

یونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا ہے

کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

زندگی تیری عطا تھی سو ترے نام کی ہے

ہم نے جیسے بھی بسر کی ترا احساں جاناں

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہے فسردہ تو بھی

دل کی کیا بات کریں دل تو ہے ناداں جاناں

اول اول کی محبت کے نشے یاد تو کر

بے پیے بھی ترا چہرہ تھا گلستاں جاناں

آخر آخر تو یہ عالم ہے کہ اب ہوش نہیں

رگ مینا سلگ اٹھی کہ رگ جاں جاناں

مدتوں سے یہی عالم نہ توقع نہ امید

دل پکارے ہی چلا جاتا ہے جاناں جاناں

ہم بھی کیا سادہ تھے ہم نے بھی سمجھ رکھا تھا

غم دوراں سے جدا ہے غم جاناں جاناں

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یاراں جاناں

سر بہ زانو ہے کوئی سر بہ گریباں جاناں

ہر کوئی اپنی ہی آواز سے کانپ اٹھتا ہے

ہر کوئی اپنے ہی سائے سے ہراساں جاناں

جس کو دیکھو وہی زنجیر بہ پا لگتا ہے

شہر کا شہر ہوا داخل زنداں جاناں

اب ترا ذکر بھی شاید ہی غزل میں آئے

اور سے اور ہوئے درد کے عنواں جاناں

ہم کہ روٹھی ہوئی رت کو بھی منا لیتے تھے

ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسم ہجراں جاناں

ہوش آیا تو سبھی خواب تھے ریزہ ریزہ

جیسے اڑتے ہوئے اوراق پریشاں جاناں

July 1, 2003 / 04:02 PM / Lahore