شہر

اب ہم دونوں اس شہر میں نہیں رہتے. لیکن کتنے اور ہیں جو وہاں رہتے ہیں. شہر تو وہی ہے لیکن اس کے مکین بدل چکے ہیں. کبھی لگتا تھا کہ یہ سب ہمارا ہے. اب حقیقت صاف نظر آتی ہے. کسی اور نے بھی یوں ہی سوچا تھا. ہم نے اس کی جگہ لے لی. پھر ہم نے بھی یہی سوچا اور کسی نے ہماری جگہ لے لی. پھر کوئی اور اس کی جگہ لے گا اور شہر وہی رہے گا.